Molana abdu rehman jami ka ishqo naat

مولانا عبدالرحٰمن جامیmolana Abdul Rahman jamii
riwayat hai ke molana Abdul Rahman jamii ( rehmat Allah alaihi ) ne mkk_h mazzmh mein hajj se farigh hokar jab madinah Munawwara jaaney ka azm kya, to usi raat governor mkk_h ko khawab mein ziyarat kerwatay ہوۓ rsolِ maqbool ( sale Allah alaihi wa-alehe wasallam ) ne farmaya ke Hajjaj karaam mein Abdul Rahman jamii naam ka 1 shakhs Iran se aaya sun-hwa hai usay madinah anay se roknay ki koshish karo, agar woh wajah daryaft kere to usay mera yeh pegham do ke tumhaarii niilii waistcoat ki jaib mein jo
naat hai, agar tum ne woh naat mere roza par aake parh di to, mujhe majboron” sharai hudood paar karkay qabar se haath nikaal kar tum se musafah karna parre ga ,
mein chahta hon ke tum se Iran hi mein mulaqaat karoon, is kaileeay tum ko har jumaraat ko ( 100 so martaba duroood shareef aur gayarah martaba yeh naat ) parh kar so jana hoga, meri ziyarat ہوجایا kere gi ,
governor mkk_h ki zabani yeh sun kar مولاناعبدالرحمن jamii ( rehmat Allah Alaihi ) Iran palat gaye aur sarkar do aalam ( sale Allah alaihi wa-alehe wasallam ) ke بموجب farmaan har jumaraat yeh amal karte aur zindagi bhar ziyarat mstfe ( sale Allah alaihi wa-alehe wasallam ) se mstfiz hotay rahay isi bِna par har jummay ko apke jism se barri lateef khushbu aaya karti thi ,
( makhoz qss الاولیا )

sarkar doaalm noore mujassam ( sale Allah alaihi wa-alehe wasallam ) ki ziyarat kaya Faizan tha, Allah taala hamein bhi is Nemat se nawazay, ( ameeen )
تنم farsodah jaaN parah
زھجراں ya rasool Allah
mera jism nakara aur tukre tukre hogaya hai
aap ki judai mein, ae Allah ke pyare nabi
dulam پژ murda awara
زعصیاں یارسول Allah
mera dil bhatak raha aur dil ka phool murjha chuka hai
gunahon ke boojh se, ae Allah ke pyare nabi
choon سوۓ mann gُzr aarey
mann مسکیں zay nadari
kabhi khawab mein apna jalva dikha den
is aajiz maskeen aur ghareeb nadaar sayel ko
فداۓ naqash-e نعلینت
knm jaaN Ya rasool Allah
to mein phir apke ( jootay ke ) naqash-e Pa par fida
ho jaa_uu ga, ae Allah ke pyare nabi
زکردہ Khawaish حیرانم
Siyah shud roz عصیانم
mein ne jo kuch kya hai bohat heran hon
روزحساب mera aamaal نامہگناہوں ki bohtat se siyah hoga
پشیمانم پشیمانم
pasheman Ya rasool Allah
mein intahi pasheman aur sakht sharminda hon
pasheman hi pasheman hon, ae Allah ke pyare nabi
زجام HUB تومستم
bah zanjeer to dil بستم
aap ki mohabbat mein, mein Mast hon
apke ishhq ki zanjeer se mera dil bandha sun-hwa hai
nami گویم ke mann ھستم
Sukhan daan Ya rasool Allah
mein aajiz aur maskeen koi daawa nahi karta ke mein
aik bohat bara شاعرہوں, ae Allah ke pyare نبیؐ
choon بازوۓ Shafaat ra
kushai bar Gunah گاراں
jab rozِ qayamat aap apni Shafaat ka baazu
lamba karkay gunah gaaron ke sir par phela den ge
mkn mhromِ jamii ra
durra aan Ya rasool Allah
uss roz iss aajiz jamii ko mahroom nah rakhiye ga
uss jaan jokhon ki naazuk gharri mein, ae Allah ke pyare nabi. .. .. .. .. .. .. . taalib دعا

روایت ہے کہ مولانا عبدالرحٰمن جامی(رحمتہ اللہ علیہ)نے مکّہ معظّمہ میں حج سے فارغ ہوکر جب مدینہ منّورہ جانے کا عزم کیا،تو اُسی رات گورنر مکّہ کو خواب میں زیارت کرواتے ہوۓ رسولِ مقبول(صلی اللہ علیہ وآلٰہ وسلم)نےفرمایا کہ حجاج کرام میں عبدالرحٰمن جامی نام کا ایک شخص ایران سے آیا ہوا ہے اسے مدینہ آنے سے روکنے کی کوشش کرو،اگر وہ وجہ دریافت کرے تو اسے میرا یہ پیغام دو کہ تمہاری نیلی واسکٹ کی جیب میں جو


نعت ہے،اگر تم نے وہ نعت میرے روضہ پر آکےپڑھ دی تو،مجھے مجبورا” شرعی حدود پار کرکے قبر سے ہاتھ نکال کر تم سے مصافحہ کرنا پڑےگا،
میں چاہتا ہوں کہ تم سے ایران ہی میں ملاقات کروں،اس کیلیئے تم کو ہر جمعرات کو (100 سو مرتبہ درود شریف اور گیارہ مرتبہ یہ نعت) پڑھ کر سو جانا ہوگا،میری زیارت ہوجایا کرے گی،
گورنر مکّہ کی زبانی یہ سُن کر مولاناعبدالرحٰمن جامی(رحمتہ اللہ علٰیہ) ایران پلٹ گئے اور سرکارِ دو عالم(صلی اللہ علیہ وآلٰہ وسلم)کے بموجب فرمان ہر جمعرات یہ عمل کرتے اور زندگی بھر زیارتِ مصطفٰے(صلی اللہ علیہ وآلٰہ وسلم) سے مستفیض ہوتے رہےاسی بِنا پر ہر جمعہ کو آپکے جسم سے بڑی لطیف خوشبو آیا کرتی تھی،
(ماخوذ قصص الاولیا)

سرکارِ دوعالم نورِ مجسّم(صلی اللہ علیہ وآلٰہ وسلم) کی زیارت کایہ فیضان تھا،اللہ تعالٰی ہمیں بھی اس نعمت سے نوازے،(آمین)
تَنَم فَرسُودَہ جَاں پَارہ
زِھِجراں یا رَسُول اللہ
میرا جسم ناکارہ اور ٹکڑے ٹکڑے ہوگیا ہے
آپ کی جدائی میں،اے اللہ کے پیارے نبی
دِلَم پَژ مُردَہ آوارَہ
زِعصیَاں یَارسُول اللہ
میرا دل بھٹک رہا اور دل کا پھول مُرجھا چکا ہے
گُناہوں کہ بوجھ سے،اے اللہ کے پیارے نبی
چُوں سُوۓ مَن گُزر آرِی
مَنِ مِسکیں زِ نَاداری
کبھی خواب میں اپنا جلوہ دکھا دیں
اس عاجِز مِسکین اور غریب نادار سائل کو
فِداۓ نقشِ نعلَینَت
کُنم جَاں یَا رسُول اللہ
تو میں پھر آپکے(جوتےکے)نقشِ پَا پر فدا
ہو جاؤں گا،اے اللہ کے پیارے نبی
زِکردہ خویش حَیرانم
سِیاہ شد روز عِصیَانَم
میں نے جو کچھ کیا ہے بہت حیران ہوں
روزِحساب میرا اعمال نامہگناہوں کی بہتات سے سیاہ ہوگا
پَشیمَانم پَشیمَانم
پشِیماں یَا رسُول اللہ
میں انتہائی پشیماں اور سخت شرمندہ ہوں
پشیمان ہی پشیمان ہوں،اے اللہ کے پیارے نبی
زِجَامِ حُبِّ تومَستَم
بَہ زَنجیرِ تو دِل بَستَم
آپ کی محبت میں،میں مَست ہوں
آپکے عشق کی زنجیر سے میرا دل بندھا ہوا ہے
نمی گویم کہ مَن ھستم
سُخن دَاں یَا رسُول اللہ
میں عاجز اور مِسکین کوئی دعویٰ نہیں کرتا کہ میں
ایک بہت بڑا شاعرہوں،اے اللہ کے پیارے نبیؐ
چُوں بازُوۓ شفاعَت را
کُشائی بَر گُنَاہ گاراں
جب روزِ قیامت آپ اپنی شفاعت کا بازو
لمبا کرکے گناہ گاروں کے سر پر پھیلا دیں گے
مَکُن محرومِ جامی را
دَرا آں یَا رسُول اللہ
اُس روز اِس عاجز جامی کو محروم نہ رکھیے گا
اُس جان جوکھوں کی نازک گھڑی میں،اے اللہ کے پیارے نبی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ طالب دعا  حاجی  پیر  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔